PARC

تعارف

تحقیقی، دائرہ کار،ا نسانی وسائل اور بنیادی ڈھانچے کے لحاظ سے پاکستان زرعی تحقیقاتی کونسل کادوسرا بڑا شعبہ ہے۔ قدرتی وسائل کایہ شعبہ سندھ کی ساحلی پٹی سے لیکر گلگت،بلتستان کے بلند اور برف پوش پہاڑوںتک مختلف زرعی ماحولیاتی علاقوں میں قدرتی وسائل پرتحقیقا تی سرگرمیاںسرانجام دے رہا ہے۔

زمین، پانی، قدرتی چراگاہیں اور جنگلات جیسے قدرتی وسائل پائیدار زرعی پیداوار کے لئے بنیادی اہمیت کے حامل ہیں۔ دنیا بھرمیں گزشتہ کئی دہائیوں میں انسانوں اور مویشیوں کی سرگرمیوں میں بے تحاشہ اضافے کی وجہ سے قدرتی وسائل اور انکی پیداواری صلاحیت بُری طرح متاثر ہوئے ہیں۔ ان حالات کی وجہ سے قدرتی وسائل کا انتظام ایک علیحدہ نظم وضبط بن کر سامنے آیا ہے۔ پاکستان زرعی تحقیقاتی کونسل کے قیام کے وقت 1981ء ہی میں قدرتی وسائل ڈویژن کا قیام عمل میں لایا گیا تھا تاکہ ملک میں قدرتی وسائل کو درپیش مسائل کیساتھ نبردآزما ہوا جاسکے۔ قدرتی وسائل ڈویژن کی طاقت اسکے اعلیٰ تعلیم یافتہ اور تجربہ کار افرادی قوت اور ملک کے مختلف زرعی ماحولیاتی علاقہ جات میں قائم جدید تحقیقاتی مراکز میں پنہاں ہے ۔
چونکہ قدرت کے عطا کردہ زمین ، پانی اور فصلات وغیرہ جیسے وسائل میں سے ہر ایک اپنے مخصوص حالات و استعمال اور مسائل ہیں لہذا قدرتی وسائل ڈویژن کا دائرہ کار نہایت وسیع اور متنوع ہے۔ شعبہِ قدرتی وسائل کی تشکیل میں اس بات کا خیال رکھاگیا ہے کہ یہ شعبہ نہ صرف قدرتی وسائل کے بارے میں نیا علم تخلیق کرے بلکہ زمین،پانی، قدرتی چراگاہوںاور جنگلات کے تحفظ کے لیے نئی ٹیکنالوجی بھی متعارف کروائے۔

پا کستان کے قدرتی وسائل کو درج ذیل اہم امور اور مسائل کا سامنا ہے :

  • متنوع قدرتی وسائل اور موسمیاتی تبدیلی ۔ باربار موافقتadaptation)) اورتخفیف mitigation))
  • زمین کی غیر منصفا نہ اور مسلسل تقسیم ،زرخیز زرعی زمینوں پر رہائشی کالونی بنانے پر پابندی لگانا اور بنجر زمینوں کو زیرِ کاشت لاکر زرعی پیداوار کے لیے استعمال کرنا
  • زمینی بگاڑ ۔ سیم و تھور، کلر اٹھی زمین، زمینی کٹائو، مٹی میں غذائیت کی کمی
  • پانی کی قلت ۔ پانی کے ذخیرہ کی کمی، زمینی پانی کا غیر ضروری اور زیادہ استعمال ، روایتی آبپاشی کے طریقے اور پانی کی کم پیداواریت(productivity)
  • توانائی کی دستیابی، قیمت اور مستقل فراہمی
  • قدرتی چراگاہوں اور جنگلات میں مسلسل کمی ۔ زمین کا غیر مناسب استعمال، بنا کسی پابندی(uncontrolled) مویشیوں کا چراگاہوں کا استعمال، جنگلات کی کٹائی اور انکی عدم بحالی