PARC
زرعی خبریں

بین الصوبائی زرعی ہم آہنگی اجلاس

December 2, 2019

<-- wp:html -->

بین الصوبائی زرعی ہم آہنگی کے حوالے سے منعقدہ 11 واں اجلاس پی اے آر سی ہیڈکوارٹرز میں ہوا۔ چیئرمین پی اے آر سی ڈاکٹر ایم عظیم خان نے اجلاس کی صدارت کی۔ ڈائریکٹر (کوآرڈینیشن) پی اے آر سی ڈاکٹر شاہد حمید نے اجلاس کے معزز ممبران کا خیرمقدم کیا۔ انہوں نے مختصرا بتایا کہ فورم کا بنیادی مقصد وفاقی اور صوبائی ریسرچ شراکت داروں اور تعلیمی اداروں کے مابین باہمی رابطوں کو بڑھانا ہے تاکہ ڈپلیکیشن اوورلیپنگ سے بچا جاسکے اور قومی سطح پر زراعت کی تحقیق کا ٹھوس ایجنڈا تیار کیا جاسکے۔
چیئرمین پی اے آر سی نے کہا کہ پی اے آر سی کے پاس ایک طرف وفاقی، صوبائی اور اعلی تعلیم ایجنسیوں اور دوسری طرف بین الاقوامی ایجنسیوں (سی جی آئی آر) کے ساتھ تحقیق کو مربوط کرنے کا ایک وسیع مینڈیٹ ہے۔ پی اے آر سی ملک بھر میں 12 سیٹلائٹ انسٹی ٹیوٹ چلاتا ہے۔ انہوں نے شرکا کو زراعت میں ہونے والے نئے اقدامات کے بارے میں آگاہ کیا اور بتایا کہ موجودہ حکومت نے 50 بیلین روپے مالیت کے میگا پراجیکٹس شروع کیے ہیں۔ خیبر پختون خوا ہ کے بارانی علاقوں میں پانی کی بچت، بارانی علاقوں میں چھوٹے اور منی ڈیم بنانا، گندم، چاول اور گنے سمیت تمام زرعی ایریا کے لیے 310 بلین فنڈر رکھے گئے ہیں۔ یہ اقدامات پاکستان کے دیہی علاقوں میں زراعت، معاشی ترقی، ملازمت میں اضافے، بنیادی ڈھانچے میں بہتری، تکنیکی جدت، اور معیار زندگی کو فروغ دینے میں کلیدی کردار ادا کریں گے۔انہوں نے مزید وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ابھرتے ہوئے مسائل، چیلنجوں پر قابو پانے اور دیہی علاقوں میں خوشحالی کے مواقع کا ادراک کرنے کے لئے معاشی ترقی کو فروغ دینے، انوویشن اور ٹکنالوجی کو آگے بڑھانا، ایک اچھی تربیت یافتہ اور پیداواری ورک فورس کو یقینی بنانا اور معیار زندگی کو بہتر بنانا سمیت متعدد محاذوں پر کارروائی کی ضرورت ہے۔ دیہی معاشروں میں انہوں نے کہا کہ کامیابی کا دارومدار طویل مدتی ترقی اور خوشحالی کے دو اہم سطونوں کو فروغ دینے پر ہے۔ دیہی معیشت میں وسیع پیمانے پر پیداواری صلاحیت میں اضافہ اور دیہی لوگوں کا ایک دوسرے سے، شہری علاقوں اور باقی دنیا سے رابطہ۔
اس اجلاس میں قومی فوڈ پالیسی، دالوں کے فروغ اور زیادہ سے زیادہ حصول، پیداوار خسارے والی فصلوں (ٹماٹر، پیاز اور تلسی) کو فروغ دینے اور زراعت کوآرڈینیٹڈ پروگرام پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ اس میٹنگ کے شرکا میں وائس چانسلر کی زراعت یونیورسٹیوں، صوبائی / گلگت بلتستان زراعت لائیو اسٹاک اور وفاقی و صوبائی منصوبہ بندی کے محکموں کے نمائندوں شامل تھے۔ فورم نے اس بات پر زور دیا کہ حکومت زراعت کے شعبے میں قانون سازی کے لئے تیز رفتار اقدامات اٹھائے۔

<-- /wp:html -->