PARC
زرعی خبریں

زرعی تحقیقاتی مرکزبرائے خشک علاقہ جات، ڈیرہ اسماعیل خان کی زرعی میدان میں نمایاں کامیابیاں

October 7, 2019


پاکستان زرعی تحقیقاتی کونسل کے زرعی تحقیقاتی مرکزبرائے خشک علاقہ جات، ڈیرہ اسماعیل خان کی زرعی میدان میں نمایاں کامیابیاں پی اے آرسی کا ڈیرہ اسماعیل خان میں قائم ادارہ صوبے کے زرعی ضروریات کو پورا کرنے میں مصروف عمل ہے۔ پی اے آر سی کے زرعی تحقیقاتی مرکز برائے خشک علاقہ جات نے چنے اور دال کی اقسام، انڈس 2019 اور دال مسور 2019کے نام سے صوبائی سیڈ کونسل کے پی سے جاری کی گئی ہیں۔زیادہ پیداوار حاصل کرنے والی گندم کی لائن AZRC-11 تیار کی گئی جس نے گندم کے قومی یکساں پیداوار آزمائشی (بارانی) 2018 میں شامل تمام 60 لائنوں کو پیچھے چھوڑ دیا۔ ماہرانہ کمیٹی کی سفارش صوبائی سیڈ کونسل کے پی کو پیش کر دی گئی ہے۔مونگ پھلی کی کاشت ٹیوب ویل آبپاشی کے تحت ڈیرہ اسماعیل خان کی تاریخ میں پہلی بار تجربہ کیا گیا جس کا کافی حوصلہ افزاء نتیجہ ملا، سب سے زیادہ پیداوار بالترتیب 5411 اور 4455کلوگرام فی ایکڑ ریکارڈ کی گئی۔ مونگ پھلی کی یہ پیداوار تلہ گنگ، چکوال اورملک کے دوسرے حصے میں حاصل ہونے والی پیداواور سے کہیں زیادہ بلکہ دوگنی ہے۔ اے آر آئی فیصل آباد(پھولکارا) اور اے آر ایس (سوات) سے پیاز کی دو اقسام اور لہسن کی دو اقسام (لہسن گلابی اور مقامی AZRCلہسن) کادریائی علاقہ میں دو مقامات پر کسانوں کے کھیتوں میں کامیابی کے ساتھ تجربہ کیا گیا۔ ڈیرہ اسماعیل خان کے علاقے میں پیاز اور لہسن کی کاشت پہلی بارکی گئی ہے جہاں کے کاشت کار کبھی بھی ایسی اعلی قدر والی فصلوں کی کاشت نہیں کرپا رہے تھے۔ پیاز کی پیداوار 19700کلو گرام فی ہیکٹر (سواتI-)سے تجاوز کر گئی ہے۔ اس دوران لہسن کی پیداوار فی ہیکٹر 13500 کلو گرام سے زیادہ ہے۔ ڈیرہ اسماعیل خان میں کپاس کو فروغ دینے کی سرگرمیاں گومل زام کمانڈ ایریا اور ڈیرہ اسماعیل خان کے دیگر علاقوں میں کپاس کی کاشت کو فروغ دینے کے لئے بنائی گئی ہیں۔ ان سرگرمیوں کو انجام دینے کے لئے پی اے آر سی کے زرعی تحقیقاتی مرکز، ڈیرہ اسماعیل خان کے تین سائنسدانوں کے ایک گروپ کو کاٹن ریسرچ اسٹیشن، ڈیرہ اسماعیل خان کے ساتھ رابطہ قائم کرنے کا کام سونپا گیا تھا۔ کاشتکاروں میں مفت بیجوں کی تقسیم کے لئے اریکا اور لیہ سیڈ کارپوریشنسے رابطہ کیا گیا اور سال 2018 میں ثقافتی اور کیڑے مکوڑوں کے انتظام کے بارے میں کسانوں کی رہنمائی کے لئے مناسبملاحظہ کیا گیا۔ زرعی تحقیقاتی مرکز برائے خشک علاقہ جات، ڈیرہ اسماعیل خان نے کے پی کے کے جنوبی علاقوں میں کینوا کی کاشت کا متعارف کرایا نیز مورنیگا اور نگیمیا نے گندم اور چنے کے لئے زرعی شاخوں کے ماڈل کے طور پر بہترین کام کیا۔گوشت اور دودھ کی پیداوار میں اضافے کے لئے AZRCفام پر خشک چارہ، سائلیج اور گھاس کی تیاری کی ٹیکنالوجی قائم کی گئی ہے۔ اس کے علاوہ چارے کی قلت کی مدت کے دوران چارے کی معقول فراہمی، مکئی سے سائیلج کی تیار ی اور برسیم سے موٹ گھاس تیار کی گئی۔پی اے آر سی کے ذیلی ادارے AZRC کی جانب سے ڈیرہ اسماعیل خان کے کسانوں کو صحت، نگہداشت،علاج اور چھوٹے اور بڑے گھاس خور جانوروں کو کھانا کھلانے کے بارے میں مشاورتی خدمات فراہم کی جاتی ہیں نیز وقتا فوقتا کاشتکار طبقے کے لئے تربیتی کیمپ اور فیلڈ ڈے کا انعقاد بھی کیا جاتا ہے۔ ادارے کی جانب سے ڈیرہ اسماعیل خان کی گرم آب و ہوا میں انگورا خرگوش کی استقامت اقدامات کا کامیاب اور نسل کشی کا تجربہ کیا گیا نیز جڑی بوٹیوں کے نچوڑ اور روایتی دوائیوں کے ذریعے جانوروں کے زخموں کے موثر علاج کے لئے کاشتکار برادری کو معلومات کی فراہمی، مشاورتی خدمات اور متعدد ویٹرنری کیمپ کی سہولت کا ایک نظام قائم کیا گیا ہے۔